اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 01:00
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ بھارت کی سپریم کورٹ کا غیر منصفانہ فیصلہ خالصتان تحریک! دہشت گرد بھارت کے خاتمے کا آغاز سلام شہداء دفاع پاکستان اور کشمیری عوام نیا سال،نئی امیدیں، نیا عزم عزم پاکستان پانی کا تحفظ اور انتظام۔۔۔ مستقبل کے آبی وسائل اک حسیں خواب کثرت آبادی ایک معاشرتی مسئلہ عسکری ترانہ ہاں !ہم گواہی دیتے ہیں بیدار ہو اے مسلم وہ جو وفا کا حق نبھا گیا ہوئے جو وطن پہ نثار گلگت بلتستان اور سیاحت قائد اعظم اور نوجوان نوجوان : اقبال کے شاہین فریاد فلسطین افکارِ اقبال میں آج کی نوجوان نسل کے لیے پیغام بحالی ٔ معیشت اور نوجوان مجھے آنچل بدلنا تھا پاکستان نیوی کا سنہرا باب-آپریشن دوارکا(1965) وردی ہفتۂ مسلح افواج۔ جنوری1977 نگران وزیر اعظم کی ڈیرہ اسماعیل خان سی ایم ایچ میں بم دھماکے کے زخمی فوجیوں کی عیادت چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا دورۂ اُردن جنرل ساحر شمشاد کو میڈل آرڈر آف دی سٹار آف اردن سے نواز دیا گیا کھاریاں گیریژن میں تقریبِ تقسیمِ انعامات ساتویں چیف آف دی نیول سٹاف اوپن شوٹنگ چیمپئن شپ کا انعقاد یَومِ یکجہتی ٔکشمیر بھارتی انتخابات اور مسلم ووٹر پاکستان پر موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات پاکستان سے غیرقانونی مہاجرین کی واپسی کا فیصلہ اور اس کا پس منظر پاکستان کی ترقی کا سفر اور افواجِ پاکستان جدوجہدِآزادیٔ فلسطین گنگا چوٹی  شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے مواقع اور مقامات  عالمی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ پاکستانی شہریوں کے قتل میں براہ راست ملوث بھارتی نیٹ ورک بے نقاب عز م و ہمت کی لا زوال داستا ن قائد اعظم  اور کشمیر  کائنات ۔۔۔۔ کشمیری تہذیب کا قتل ماں مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ اور بھارتی سپریم کورٹ کی توثیق  مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ۔۔ایک وحشیانہ اقدام ثقافت ہماری پہچان (لوک ورثہ) ہوئے جو وطن پہ قرباں وطن میرا پہلا اور آخری عشق ہے آرمی میڈیکل کالج راولپنڈی میں کانووکیشن کا انعقاد  اسسٹنٹ وزیر دفاع سعودی عرب کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  پُرعزم پاکستان سوشل میڈیا اور پرو پیگنڈا وار فئیر عسکری سفارت کاری کی اہمیت پاک صاف پاکستان ہمارا ماحول اور معیشت کی کنجی زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ صاف پانی کا بحران،عوامی آگہی اور حکومتی اقدامات الیکٹرانک کچرا۔۔۔ ایک بڑھتا خطرہ  بڑھتی آبادی کے چیلنجز ریاست پاکستان کا تصور ، قائد اور اقبال کے افکار کی روشنی میں قیام پاکستان سے استحکام ِ پاکستان تک قومی یکجہتی ۔ مضبوط پاکستان کی ضمانت نوجوان پاکستان کامستقبل  تحریکِ پاکستان کے سرکردہ رہنما مولانا ظفر علی خان کی خدمات  شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن ہو بہتی جن کے لہو میں وفا عزم و ہمت کا استعارہ جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار کرگئے جو نام روشن قوم کا رمضان کے شام و سحر کی نورانیت اللہ جلَّ جَلالَہُ والد کا مقام  امریکہ میں پاکستا نی کیڈٹس کی ستائش1949 نگران وزیراعظم پاکستان، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر اور  چیف آف آرمی سٹاف کا دورۂ مظفرآباد چین کے نائب وزیر خارجہ کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  ساتویں پاکستان آرمی ٹیم سپرٹ مشق 2024کی کھاریاں گیریژن میں شاندار اختتامی تقریب  پاک بحریہ کی میری ٹائم ایکسرسائز سی اسپارک 2024 ترک مسلح افواج کے جنرل سٹاف کے ڈپٹی چیف کا ایئر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد کا دورہ اوکاڑہ گیریژن میں ''اقبالیات'' پر لیکچر کا انعقاد صوبہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں مقامی آبادی کے لئے فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد  بلوچستان کے ضلع خاران میں معذور اور خصوصی بچوں کے لیے سپیشل چلڈرن سکول کاقیام سی ایم ایچ پشاور میں ڈیجٹلائیز سمارٹ سسٹم کا آغاز شمالی وزیرستان ، میران شاہ میں یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد کما نڈر پشاور کورکا ضلع شمالی و زیر ستان کا دورہ دو روزہ ایلم ونٹر فیسٹول اختتام پذیر بارودی سرنگوں سے متاثرین کے اعزاز میں تقریب کا انعقاد کمانڈر کراچی کور کاپنوں عاقل ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کوٹری فیلڈ فائرنگ رینج میں پری انڈکشن فزیکل ٹریننگ مقابلوں اور مشقوں کا انعقاد  چھور چھائونی میں کراچی کور انٹرڈویژ نل ایتھلیٹک چیمپئن شپ 2024  قائد ریزیڈنسی زیارت میں پروقار تقریب کا انعقاد   روڈ سیفٹی آگہی ہفتہ اورروڈ سیفٹی ورکشاپ  پی این فری میڈیکل کیمپس پاک فوج اور رائل سعودی لینڈ فورسز کی مظفر گڑھ فیلڈ فائرنگ رینجز میں مشترکہ فوجی مشقیں طلباء و طالبات کا ایک دن فوج کے ساتھ روشن مستقبل کا سفر سی پیک اور پاکستانی معیشت کشمیر کا پاکستان سے ابدی رشتہ ہے میر علی شمالی وزیرستان میں جام شہادت نوش کرنے والے وزیر اعظم شہباز شریف کا کابینہ کے اہم ارکان کے ہمراہ جنرل ہیڈ کوارٹرز  راولپنڈی کا دورہ  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کی  ایس سی او ممبر ممالک کے سیمینار کے افتتاحی اجلاس میں شرکت  بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر ایچ آر ایچ کی جوائنٹ سٹاف ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر دفاع کی یوم پاکستان میں شرکت اور آرمی چیف سے ملاقات  چیف آف آرمی سٹاف کا ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا کا دورہ  آرمی چیف کا بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ  پاک فوج کی جانب سے خیبر، سوات، کما نڈر پشاور کورکا بنوں(جا نی خیل)اور ضلع شمالی وزیرستان کادورہ ڈاکیارڈ میں جدید پورٹل کرین کا افتتاح سائبر مشق کا انعقاد اٹلی کے وفد کا دورہ ٔ  ائیر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد  ملٹری کالج سوئی بلوچستان میں بلوچ کلچر ڈے کا انعقاد جشن بہاراں اوکاڑہ گیریژن-    2024 غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ پاک فوج کی جانب سے مظفر گڑھ میں فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد پہلی یوم پاکستان پریڈ
Advertisements

رابعہ رحمٰن

Advertisements

ہلال اردو

ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار

مارچ 2024

پریڈ لائن میں زخمی ہونے والے نوجوان حسان بن جنید کی جرأت آمیز کہانی پر مبنی مضمون

وطنِ عزیز پاکستان کا دفاع ہمیں بہت مقدم ہے۔ اس کے لیے ہماری مسلح افواج انتہائی تندہی سے اپنے فرائض سرانجام دے رہے ہوتی ہیں اور وقت پڑنے پر اس کے جوان اور افسر اپنی جانیں قربان کرنے سے بھی دریغ نہیں کرتے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں صرف ہماری مسلح افواج ہی نہیں بلکہ پاکستانی قوم نے بھی اپنی جانوں کی پروا  نہیں کی اور ملک کو دہشت گردی کے عفریت سے نکالنے میں کردار ادا کیا۔ دہشت گرد نہ صرف مسلح افواج اور ملکی املاک پر حملہ آور ہوئے بلکہ انہوں نے تعلیمی اداروں ، مذہبی مقامات اور مساجد کا بھی احترام نہیں کیا۔ اس طرح کا ایک واقعہ 4 دسمبر2009 کو ہوا جس میں دہشت گردوں نے پریڈ لائن میں واقع مسجد میں نمازیوں پر حملہ کردیا۔
حسان بن جنید بھی ان غازیوں میں شامل تھے جو کہ 4دسمبر2009ء میں پریڈلین کی مسجد میں دہشت گردی کا شکار ہوئے اور آج پاک فوج کا کپتان بن کے ایک نئے عزم کے ساتھ ملک کی خدمت کررہے ہیں۔
حسان احمد نے کہاکہ میرے والدلیفٹیننٹ کرنل جنید مسجد ہمیشہ جلدی پہنچ جانے کی تلقین کیاکرتے تھے۔ اس دن بھی انہوں نے ہمیں جلد آنے کا کہا اور چلے گئے۔ میں اور میرا بھائی عفان بمشکل وقت پہ پہنچے، خطبے کے فوراً بعد پہلا بلاسٹ ہوتے ہی فائرنگ شروع ہوئی۔
ان کے والد جنید محفوط جگہ پہ تھے ان کو فوری طور پر گارڈز نے ان کے گھروںکی طرف نکال دیاجو نسبتاً محفوظ تھے، مگر حسان احمد جو حافظ قرآن بھی ہے، وہ اس وقت پہلی صف میں نماز پڑھنے لگا تھا اس کے ساتھ چھوٹا عفان بھی تھا۔ حسان نے جب دیکھا کہ زندگی کا دائرہ تنگ ہورہاہے اور میں تو اتنی طاقت میں ہوں کہ بھاگ سکتا ہوں مگر میرا چھوٹا بھائی عفان جو بہت ہی خوفزدہ ہے اس کا بچنا ان حالات میں بہت مشکل ہوجائے گا، اس نے راستہ ہوتے ہوئے بھی اپنے بھائی کو بچانے کی خاطر خود کو اس کی ڈھال بنایا۔
آخر تلوار کی زد تو پہلے ڈھال پہ لگتی ہے، عفان تو پیچھے چھپ گیا مگر حسان احمد نہ چھپ سکا۔ایسے لگ رہاتھا کہ ایک بہادر سپاہی اپنے دشمن کے سامنے سینہ سپرہے کہ آئو تمہارا وار سہنے کو تیارہوں۔
برگ ضعیف کی ٹہنیاں نہیں ہیں ہم
عزم آہن سے کاٹی ہیں تلواریں ہم نے
اورپھر ایک گولی حسان کے کندھے سے نکل کر پھیپھڑے سے باہر نکلی۔
حسان چلایا،عفی بھاگو یہ تمہیں مار دینگے، میں چل نہیں سکتااورپھر حسان کی آنکھوں کے آگے اندھیرا چھانے لگا دوسری گولی اس کے بازو سے نکلی اورپھر ایک گرینیڈ اس کے پاس آکے گرا مگر ساتھ ہی اس کے اوپر کوئی گرپڑاجس کی وجہ سے اس شخص کے توجسم کے ٹکڑے فضامیں بلندہوگئے مگر حسان کے ہاتھوں کا گوشت اڑگیا اور بازو شدید زخمی ہوا، جسم کے ہر حصے میں گرینیڈکے ٹکڑے لگے تھے۔
عفان کبھی مڑکے بھائی کو دیکھتا تھا،کبھی ماں کا چہرہ اس کی آنکھوں کے آگے آتا اورپھر وہ بچہ کھڑکی پھلانگ گیا۔ اس نے وہاں سے فون کیا کہ ماما بھائی جان کو تو گولیاں لگ گئی ہیں۔ ادھر جنید اس مخمصے میں تھے کہ ان کے بیٹے مسجد آئے ہی نہیں ہیںکیونکہ وہ خود بھی ان کو گھر چھوڑکر جلدی میں نکل آئے تھے کہ جمعہ قضانہ ہوجائے، موبائل بجا جنید نے اٹھایا تو مسز جنید بولیں جنیدمیرے بچے کہاں ہیں؟
وہ تو سمجھ بیٹھے تھے کہ وہ گھر ہیں۔ پھر جنید وہاں سے نکلے اور بچوں کو ڈھونڈنے لگے لیکن جب پتہ چلاکہ عفان ٹھیک ہے، حسان کو گولیاں لگی ہیں تودل کی دھڑکن سینے سے باہرنکلی جارہی تھی۔ نہیں جو اللہ کا قرآن اپنے سینے میں محفوظ رکھتاہے اس کی حفاظت کا سامان تو اس کے اندر موجود ہے۔ مگر حسان کو وہاںنہ پاکر کاشفہ اورجنید ایم ایچ کی طرف دوڑے، وہاں پانچ کمروں میں زخمی اور شہید لائے گئے۔ کون سا چہرہ دیکھیں، کون سی چادر ہٹائیں، ممتا کے ہاتھ کانپتے رہے، آنسوگرتے رہے، جسم سے جان نکلتی رہی، وقت رک ساگیا، ہر چادر کے نیچے کسی کا لخت جگر تھا،کسی کا سہاگ، خون سے لپٹا ہواہرجسم وہاں ساکت پڑا تھا۔ بس سانس تھی کہ آرہی تھی، جارہی تھی۔
وہاں لیٹاہوا ہرمرد اور بچہ اپنا ہی لگ رہا تھا۔ دیکھتے ہی دیکھتے کرنل جنید اور کاشفہ نے چار کمرے دیکھ لیے، اب آخری کمرے میں ممتا کے دل سے آہ نکلی۔یااللہ یہاں تومیرا حسان مل جائے اورپھر ایک کونے میں خون سے لت پت حسان نظرآگیا۔
باپ کتنے بھی حوصلے میں ہوں ایک بار تو دل ان کا بھی کانپ جاتاہے، جنیدنے لہو بھرے ماتھے پہ بیٹے کو بوسہ دیا، میں آگیا ہوں، حسان اور حسان نے آنکھیں کھول دیں۔یہ تومعجزہ تھا ، وہ تو زندہ تھا ، اتنی گولیاں اور گرنیڈ! کسی کی دعاتھی یاکسی کی نیکی ۔ کیا ہماری وہ دعائیں جو قبول نہیں ہوئیں وہ آج اکٹھی ہوکر قبول ہوگئیں، ایک دعابن کر حسان کی زندگی کی صورت۔
ماں نے بیٹے کے اوپر سے چادر اتاری، اس کی پسلیاں سوجن سے پھٹ چلی تھیں، مگر حیرت کہ نہ درد تھانہ خوف۔ حسان مسکرانے لگا ماں میں ٹھیک ہوں، ماں نے خون آلود پائوں چومے، ڈاکٹرشہزادجو کرنل جنیدکے کزن تھے، وہ ایم ایچ میں موجود تھے،انہوں نے جب حسان کی یہ حالت دیکھی تو انہوں نے لمحہ لگائے بغیر آپریشن تھیٹرپہنچادیا، حسان کے لیے ڈاکٹرشہزاد زندگی کا فرشتہ بن گئے۔ یہاں تو تدبیر کچھ نہ تھی،صرف تقدیر تھی اوریوں حسان احمد اتنے بڑے حادثے سے اتنی خطرناک حالت  سے اس طرح نکل آیا کہ آج بھی یقین نہیں آتا۔
 حسان کے پورے جسم پہ سفید پٹیاں بندھی ہوئی تھیں مگر وہ سچامومن تھا،مسکرا رہاتھا۔
سب نے کہایہ کیا کیا بھئی؟
'بھائی کو بچانے کے لیے گولی تو کھانی پڑتی ہے۔'
یہ اس کا پہلاجملہ تھا۔
وہ بچہ جس کا خواب ایک فوجی افسر بننا تھا۔وہ والدجس نے نجانے کتنی مرتبہ اپنے بیٹے کو وردی پہنے دیکھا۔ماں جو نجانے کب سے اپنے بیٹے کی پاسنگ آئوٹ پریڈکا انتظارکررہی ہے، وہ سارے خواب بناتعبیرکے رہ گئے۔حسان کے اپنے بھی خواب ہوں گے جو شاید اس نے ایک کاغذ کی کشتی میں بہادیے ہونگے، کہ ان کے پورے ہونے کا وقت کبھی نہیں آئے گا۔ 
اگرساحل نظرآئے تلاطم بھول جانا تم
جیناپھرسے چاہوتوماتم بھول جانا تم
کے مصداق حسان احمدجو فوج میں جانے کے خواب دیکھا کرتا تھا مایوس نہیں ہوا اور اس نے2015ء میں135 لانگ کورس میںApplyکیا، میڈیکل کے شروع میں انٹرویو ہوتاہے۔Army Selection and Recruitment Centre میں حسان کو ڈاکٹر نے کہاکہ میں آپ کو پاس کرہی نہیں سکتا اس لیے آپ پہلے ایکDOلکھیں چیف کو یا ڈی جی سرجری کو۔ اگر وہ فیصلہ کریںگے تو ہم آپ کا انٹرویو کرینگے۔ حسان کے کہنے کے مطابق میں اس وقت بھی پُرامید تھا۔ اس نے اس وقت کے آرمی چیف جنرل راحیل شریف کوDOلکھا جس کا فائدہ یہ ہوا کہ انہوں نے دو ہفتوں کے اندر ہی میڈیکل بورڈ بنادیاجس کی کارروائی ایک ماہ چلی اور اس نے حسان کو پھر سےUnfit for Armyکردیا۔ گھروالوں نے کہاکہ بیٹا آپ آگے بڑھو اور بھی بہت سے طریقے ہیں وطن کی خدمت کے۔ حسان نے انجینئرنگ میں داخلہ لیا اور 2018ء میں حسان کی ڈگری مکمل ہوئی تو اس کے اندر پھر سے دبی ہوئی چنگاری بھڑکنے لگی۔ Volunteer Military Service Systemکے مطابق فوج نے دوبارہ حسان کوموقع دیااور اس دوران حسان نے ایک بار پھر چیف کوDOلکھا، سرجن جنرل کو بھی اورDGPAکو بھی لکھا۔انہوں نے دوبارہ میڈیکل کروایا اور سرجن جنرل نے ذاتی طور پہ انٹرویومیںFit for Armyکیا۔ یہ ستمبر2018ء میں ہوا۔ حسان نے کہا مجھے یاد ہے جب میں سرجن جنرل کے سامنے گیا تومجھے ماںنے کہہ کے بھیجا تھاکہ بیٹا اگر انکار ہوجائے تو دل پرمت لینا،میں پھر بھی بہت امیدلگاکر گیا،جنرل نے جاتے ہی پوچھا ہاں جوان کتنے Pushups اورPullups کرلیتے ہو،اور گیمز کونسی کھیلتے ہو، حسان نے بتایا کہPushups 50-60 چیسٹ ویٹ80kgاٹھاتاہوں اورٹینس کھیلتاہوں۔ وہ کہنے لگے کہ میں تویہ سب نہیں کرسکتااورمسکرانے لگے، میں باہر آگیا۔ اس انٹرویو کے بعد ایک مرحلہ آتاہے کہ اندر سے چٹ آتی ہے جس پہ فِٹ اوراَن فٹ لکھاہوتاہے۔ مجھے یقین تھاکہ مجھے پہلے اَن فٹ کیاگیاہے تو اب بھی میرے نام کی چٹ آئے گی۔ پہلے مرحلے میں جتنی بار چٹ لے کے آدمی باہر آتا میں کھڑا ہوکرہاتھ بڑھاتاکہ میری ہی ہوگی مگر ایسا نہیں ہوا اورپھر دوسرے مرحلہ میں اچانک میرے ہاتھ میں وہ چٹ آئی جس پہFit For Armyلکھا تھا۔ میری آنکھوں میں جتنے خوشی کے آنسو تھے وہ میں نے پی لیے اور گھر آکے ماں کو بتانے کے لیے میری آواز میرا ساتھ نہیں دے رہی تھی، میرے آنسو میری اماں کی آنکھوں میں سے بہہ رہے تھے۔
حسان نے 26نومبر2018ء میں ٹریننگ جوائن کی اور5مئی2019ء کو پاس آئوٹ ہوکر502ورکشاپ میںپوسٹ ہوا۔ پھر EMEکالج میں کورس کیا اور آج کل ملتان پوسٹنگ پر ہیں۔
بلاشبہ حسان جیسے نوجوان اس قوم کا مان اور اُمید ہیں کہ حالات چاہے کتنے بھی بدتر کیوں نہ ہو جائیں، آپ کوشش اور لگن کا دامن نہ چھوڑیں اور دلجمعی سے مقصد کے حصول کے لیے کوشش جاری رکھیں تو اﷲ کریم ضرورکامیابی عطا فرماتے ہیں۔


مضمون نگار ایک قومی اخبار میں کالم لکھتی ہیں اور متعدد کتابوں کی مصنفہ  بھی ہیں۔
[email protected]
 

مضمون 389 مرتبہ پڑھا گیا۔

رابعہ رحمٰن

Advertisements