اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 14:55
مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ بھارت کی سپریم کورٹ کا غیر منصفانہ فیصلہ خالصتان تحریک! دہشت گرد بھارت کے خاتمے کا آغاز سلام شہداء دفاع پاکستان اور کشمیری عوام نیا سال،نئی امیدیں، نیا عزم عزم پاکستان پانی کا تحفظ اور انتظام۔۔۔ مستقبل کے آبی وسائل اک حسیں خواب کثرت آبادی ایک معاشرتی مسئلہ عسکری ترانہ ہاں !ہم گواہی دیتے ہیں بیدار ہو اے مسلم وہ جو وفا کا حق نبھا گیا ہوئے جو وطن پہ نثار گلگت بلتستان اور سیاحت قائد اعظم اور نوجوان نوجوان : اقبال کے شاہین فریاد فلسطین افکارِ اقبال میں آج کی نوجوان نسل کے لیے پیغام بحالی ٔ معیشت اور نوجوان مجھے آنچل بدلنا تھا پاکستان نیوی کا سنہرا باب-آپریشن دوارکا(1965) وردی ہفتۂ مسلح افواج۔ جنوری1977 نگران وزیر اعظم کی ڈیرہ اسماعیل خان سی ایم ایچ میں بم دھماکے کے زخمی فوجیوں کی عیادت چیئر مین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کا دورۂ اُردن جنرل ساحر شمشاد کو میڈل آرڈر آف دی سٹار آف اردن سے نواز دیا گیا کھاریاں گیریژن میں تقریبِ تقسیمِ انعامات ساتویں چیف آف دی نیول سٹاف اوپن شوٹنگ چیمپئن شپ کا انعقاد یَومِ یکجہتی ٔکشمیر بھارتی انتخابات اور مسلم ووٹر پاکستان پر موسمیاتی تبدیلیوں کے اثرات پاکستان سے غیرقانونی مہاجرین کی واپسی کا فیصلہ اور اس کا پس منظر پاکستان کی ترقی کا سفر اور افواجِ پاکستان جدوجہدِآزادیٔ فلسطین گنگا چوٹی  شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے مواقع اور مقامات  عالمی دہشت گردی اور ٹارگٹ کلنگ پاکستانی شہریوں کے قتل میں براہ راست ملوث بھارتی نیٹ ورک بے نقاب عز م و ہمت کی لا زوال داستا ن قائد اعظم  اور کشمیر  کائنات ۔۔۔۔ کشمیری تہذیب کا قتل ماں مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ اور بھارتی سپریم کورٹ کی توثیق  مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت کا خاتمہ۔۔ایک وحشیانہ اقدام ثقافت ہماری پہچان (لوک ورثہ) ہوئے جو وطن پہ قرباں وطن میرا پہلا اور آخری عشق ہے آرمی میڈیکل کالج راولپنڈی میں کانووکیشن کا انعقاد  اسسٹنٹ وزیر دفاع سعودی عرب کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  پُرعزم پاکستان سوشل میڈیا اور پرو پیگنڈا وار فئیر عسکری سفارت کاری کی اہمیت پاک صاف پاکستان ہمارا ماحول اور معیشت کی کنجی زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ صاف پانی کا بحران،عوامی آگہی اور حکومتی اقدامات الیکٹرانک کچرا۔۔۔ ایک بڑھتا خطرہ  بڑھتی آبادی کے چیلنجز ریاست پاکستان کا تصور ، قائد اور اقبال کے افکار کی روشنی میں قیام پاکستان سے استحکام ِ پاکستان تک قومی یکجہتی ۔ مضبوط پاکستان کی ضمانت نوجوان پاکستان کامستقبل  تحریکِ پاکستان کے سرکردہ رہنما مولانا ظفر علی خان کی خدمات  شہادت ہے مطلوب و مقصودِ مومن ہو بہتی جن کے لہو میں وفا عزم و ہمت کا استعارہ جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا ہے جذبہ جنوں تو ہمت نہ ہار کرگئے جو نام روشن قوم کا رمضان کے شام و سحر کی نورانیت اللہ جلَّ جَلالَہُ والد کا مقام  امریکہ میں پاکستا نی کیڈٹس کی ستائش1949 نگران وزیراعظم پاکستان، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر اور  چیف آف آرمی سٹاف کا دورۂ مظفرآباد چین کے نائب وزیر خارجہ کی چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی سے ملاقات  ساتویں پاکستان آرمی ٹیم سپرٹ مشق 2024کی کھاریاں گیریژن میں شاندار اختتامی تقریب  پاک بحریہ کی میری ٹائم ایکسرسائز سی اسپارک 2024 ترک مسلح افواج کے جنرل سٹاف کے ڈپٹی چیف کا ایئر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد کا دورہ اوکاڑہ گیریژن میں ''اقبالیات'' پر لیکچر کا انعقاد صوبہ بلوچستان کے دور دراز علاقوں میں مقامی آبادی کے لئے فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد  بلوچستان کے ضلع خاران میں معذور اور خصوصی بچوں کے لیے سپیشل چلڈرن سکول کاقیام سی ایم ایچ پشاور میں ڈیجٹلائیز سمارٹ سسٹم کا آغاز شمالی وزیرستان ، میران شاہ میں یوتھ کنونشن 2024 کا انعقاد کما نڈر پشاور کورکا ضلع شمالی و زیر ستان کا دورہ دو روزہ ایلم ونٹر فیسٹول اختتام پذیر بارودی سرنگوں سے متاثرین کے اعزاز میں تقریب کا انعقاد کمانڈر کراچی کور کاپنوں عاقل ڈویژنل ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کوٹری فیلڈ فائرنگ رینج میں پری انڈکشن فزیکل ٹریننگ مقابلوں اور مشقوں کا انعقاد  چھور چھائونی میں کراچی کور انٹرڈویژ نل ایتھلیٹک چیمپئن شپ 2024  قائد ریزیڈنسی زیارت میں پروقار تقریب کا انعقاد   روڈ سیفٹی آگہی ہفتہ اورروڈ سیفٹی ورکشاپ  پی این فری میڈیکل کیمپس پاک فوج اور رائل سعودی لینڈ فورسز کی مظفر گڑھ فیلڈ فائرنگ رینجز میں مشترکہ فوجی مشقیں طلباء و طالبات کا ایک دن فوج کے ساتھ روشن مستقبل کا سفر سی پیک اور پاکستانی معیشت کشمیر کا پاکستان سے ابدی رشتہ ہے میر علی شمالی وزیرستان میں جام شہادت نوش کرنے والے وزیر اعظم شہباز شریف کا کابینہ کے اہم ارکان کے ہمراہ جنرل ہیڈ کوارٹرز  راولپنڈی کا دورہ  چیئرمین جوائنٹ چیفس آف سٹاف کمیٹی کی  ایس سی او ممبر ممالک کے سیمینار کے افتتاحی اجلاس میں شرکت  بحرین نیشنل گارڈ کے کمانڈر ایچ آر ایچ کی جوائنٹ سٹاف ہیڈ کوارٹرز راولپنڈی میں چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف کمیٹی سے ملاقات  سعودی عرب کے وزیر دفاع کی یوم پاکستان میں شرکت اور آرمی چیف سے ملاقات  چیف آف آرمی سٹاف کا ہیوی انڈسٹریز ٹیکسلا کا دورہ  آرمی چیف کا بلوچستان کے ضلع آواران کا دورہ  پاک فوج کی جانب سے خیبر، سوات، کما نڈر پشاور کورکا بنوں(جا نی خیل)اور ضلع شمالی وزیرستان کادورہ ڈاکیارڈ میں جدید پورٹل کرین کا افتتاح سائبر مشق کا انعقاد اٹلی کے وفد کا دورہ ٔ  ائیر ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد  ملٹری کالج سوئی بلوچستان میں بلوچ کلچر ڈے کا انعقاد جشن بہاراں اوکاڑہ گیریژن-    2024 غازی یونیورسٹی ڈیرہ غازی خان کے طلباء اور فیکلٹی کا ملتان گیریژن کا دورہ پاک فوج کی جانب سے مظفر گڑھ میں فری میڈیکل کیمپ کا انعقاد پہلی یوم پاکستان پریڈ
Advertisements

ہلال اردو

زراعت: فوری توجہ طلب شعبہ

مارچ 2024

 زراعت ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتی ہے، ہمارے ملک کی بڑی آبادی کاشتکاری سے منسلک ہے اور یہ سب سے زیادہ خود روزگار فراہم کرنے والا شعبہ ہے لیکن پاکستان میں کاشتکاری روایتی طریقوں سے کی جارہی ہے اور زرعی شعبہ میں جدید ٹیکنالوجی اور طریقوں کو بروئے کار نہیں لایا جارہا ، جسکی وجہ سے زرعی ملک ہونے کے باوجود ملک کی بڑی آبادی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے اجناس کافی نہیں ہوتیں اور درآمد پر انحصار کرنا پڑتا ہے اور کسان بھی خوشحال نہیں۔ خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل (ایس آئی ایف سی)کے وژن کے تحت زراعت کو بھی ترجیحی شعبے میں شامل کیا گیا ہے اور اگر اس وژن کو حقیقی معنوں میں اختیار کیا گیا تو زرعی شعبہ میں انقلاب برپا ہوسکتا ہے اور یہ پاکستان کے 24 کروڑ عوام کی ترقی و خوشحالی کا ضامن ہوگا۔ایس آئی ایف سی پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے لیے ایک بڑا محرک اور دوررس وژن کا حامل ہے، اس وژن پر عملدرآمد کریں تو کوئی بھی چیز ہماری ترقی میں رکاوٹ نہیں بن سکتی۔



ملکی خوشحالی کے لیے زرعی اراضی کا تحفظ ضروری ہے حکومت اس سلسلے میں بھرپور اقدامات اٹھا رہی ہے۔زراعت کے شعبے کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے جو خصوصی سرمایہ کاری سہولت کونسل(ایس آئی ایف سی)کے ایجنڈے میں سرفہرست شعبہ ہے، وزارت منصوبہ بندی نے زرعی شعبوں سے متعلق ترقیاتی منصوبوں کے جلد نفاز کے لئے کوششیں تیز کرتے ہوئے متعلقہ وزارتوں اور صوبائی حکومتوں کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ ان منصوبوں کو جلد مکمل کریں تاکہ زراعت کے شعبے میں جلد ترقی حاصل کی جاسکے۔
واضح رہے کہ پلاننگ کمیشن میں اس حوالے سے ایک کمیٹی بھی مرتب کی گئی ہے جس کے ٹرمز آف ریفرنس میں فوڈ سکیورٹی، زرعی ترقی، دیہی علاقوں کی روزی روٹی اور شہری علاقوں کی طرف ہجرت کی بڑھتی ہوئی رفتار کے حوالے سے لینڈ ڈویلپرز یا ہاؤسنگ سوسائٹیز کے ذریعے زرعی اراضی کو تبدیل کرنے کے ممکنہ مضمرات پر غور کرنا شامل ہے۔ ٹی او آرز میں اس موضوع سے متعلق موجودہ وفاقی اور صوبائی قانون سازی کے ساتھ ساتھ زمین کے استعمال اور زوننگ کے مروجہ ضوابط کا جائزہ لینا بھی شامل ہے۔ کمیٹی متعلقہ سٹیک ہولڈرز اور شعبے کے ماہرین سے مشاورت کرے گی تاکہ صوبوں کے درمیان زرعی اراضی کو ہائوسنگ سوسائٹیز یا انڈسٹریل سٹیٹس میں تبدیل کرنے کی حوصلہ شکنی کے لیے قوانین متعارف کرانے کے حوالے سے اتفاق رائے پیدا کیا جا سکے۔ رواں مالی سال میں زراعت کے شعبے کے لیے پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام (پی ایس ڈی پی) کے تحت اربوں روپے مالیت کے کئی منصوبے مختص کیے گئے ہیں تاکہ زرعی شعبے سے بھرپور استفادہ کیا جا سکے۔ ان منصوبوں میں کیج کلچر کلسٹر ڈویلپمنٹ کا منصوبہ ، پاکستان میں آلو ٹشو کلچر ٹیکنالوجی کی کمرشلائزیشن، صارفین کے ذریعے بیج کی تصدیق کے نظام کا قیام، جنوبی بلوچستان میں سیڈ سرٹیفیکیشن سروسز کا قیام ،قومی تیل کے بیج بڑھانے کا پروگرام، پاکستان کے بارانی علاقوں میں کمانڈ ایریا بڑھانے کا قومی پروگرام؛ پاکستان میں آبی گزرگاہوں کی بہتری کے لیے قومی پروگرام ،گنے کی پیداواری صلاحیت میں اضافہ،گندم کی پیداواری صلاحیت میں اضافہ جیسے دیگر منصوبے شامل ہیں۔
واضح رہے کہ پاکستان میں زراعت کے شعبوں میں غیر ملکی سرمایہ کاری کے وسیع امکانات ہیں جس کے لیے ایس آئی ایف سی بھرپور اقدامات اُٹھا رہی ہے۔ یاد رہے کہ ایس آئی ایف سی کا قیام اس سال کے شروع میں غیر ملکی اور مقامی سرمایہ کاری کو راغب کرنے کے لیے شروع کیا گیا تھا جس میں پانچ اہم شعبوں کو اہمیت دی جا رہی ہے جن میں زراعت، دفاعی پیداوار، کان کنی/معدنیات، انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی کمیونیکیشن اور توانائی جیسے دیگر منصوبے شامل ہیں۔ زرعی شعبے سے متعلق اہم ترین منصوبوں میں 5000 ملین روپے کے لاگت کا گرین ریوولیوشن 2.0 کا منصوبہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جس کا مقصد زراعت کی پیداواری صلاحیت میں اہم رکاوٹوں کو دورکرنا ہے۔حکومت نے کٹائی کے بعد ہونے والے نقصانات کو کم کرنے، اناج، پھلوں اور سبزیوں کی قدر میں اضافہ، بڑی فصلوں کی پیداواری صلاحیت میں اضافہ، خواتین اور نوجوانوں کو زراعت، زرعی کاروبار میں شامل کرنے اور زرعی تحقیق کو فروغ دینے اور معاونت کرنے کے لیے ٹیکنالوجی کے فروغ پر بھی بھرپور اقدامات اٹھائیں۔ پاکستان کی غذائی مصنوعات برآمد کرنے کی صلاحیت سخت بین الاقوامی معیارات کی وجہ سے محدود ہے۔ پھلوں اور سبزیوں کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے باغبانی کی فصلوں کی اہم رکاوٹوں کو دور کرنے کے لیے 1000 ملین روپے کا ایک اور منصوبہ ''ہارٹیکلچر سپورٹ پروگرام'' ہے۔ اس منصوبے کو منتخب پھلوں اور سبزیوں کے میدان میں اور فصل کے بعد ہونے والے نقصانات کو کم کرنے کے لیے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے ذریعے ویلیو ایڈنگ ٹیکنالوجیز کا مظاہرہ کرتے ہوئے باغبانی کی ویلیو چینز کو مربوط اور مضبوط کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔پاکستان میں زرعی ٹیوب ویلوں کی سولرائزیشن کے لیے 377,017 ملین روپے کا ایک اور منصوبہ جس کے تحت 100,000 ٹیوب ویلوں کی تعداد کو تبدیل کیا جا رہا ہے جس میں 50,000 ڈیزل اور 50,000  بجلی کے ٹیوب ویلوں کو تبدیل کرنا شامل ہیں۔
زندگی کا انحصار پانی کے بعد بلاشبہ خوراک پر ہے۔خوراک کے مختلف ذرائع ہوسکتے ہیں لیکن ان میں سے نباتات ہی وہ پہلا اور سب سے بڑا ذریعہ ہے جس سے انسانوں اور حیوانوں نے اپنی زندگی کو دوام بخشا ہے یعنی نباتات کے بغیر انسان اور حیوانات گویا زیادہ عرصہ اس کرۂ ارض پر زندہ نہیں رہ سکتے۔یہی وجہ ہے کہ انسان نے ابتدا سے ہی اس بنیادی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے کسب زراعت سیکھا اور انسان جہاں آباد ہوتا گیا، ساتھ ہی اس نے اپنے لیے اجناس اگانے اور اس کے لیے موزوں زمین کو اپنی ترجیحات میں سرفہرست رکھا ۔ انسانی معاشرہ ٹیکنالوجی میں بے شک جتنی بھی ترقی کرے لیکن بھوک کا مقابلہ کرنے کے لیے اسے ہر حال میں خوراک چاہیے اور خوراک سب سے زیادہ زراعت کے شعبے سے ہی ملتی ہے اس لیے ہم کہہ سکتے ہیں کہ زراعت ہی وہ شعبہ ہے جو زندگی کی بنیاد ہے۔کوئی بھی اس کی اہمیت سے انکار نہیں کرتا لیکن بدقسمتی سے اس کی اہمیت کو تسلیم کرنے کے باوجود دیگر ممالک کے مقابلے میں ماضی میں پاکستان میں اس شعبے کی طرف توجہ نہیں دی گئی اور بات یہاں تک پہنچی کہ ایک زرعی ملک ہونے کے باوجود پاکستان اب گندم تک دیگر ممالک سے خرید کر لانے پر مجبور ہے۔
دیگر حکومتی اقدامات کے ساتھ زراعت کے شعبے کو بلندی پر پہنچانے کے لیے کچھ بنیادی اقدامات کی فوری ضرورت ہے جن میں زرعی زمینوں پر ہائوسنگ منصوبوں کی روک تھام، کسانوں کے لیے کھاد اور تخم کا بندوبست، زرعی لیبر کے معاوضے میں اضافہ، بنجر زمینوں کو کاشت کے قابل بنانا، زرعی زمینوں کے لیے پانی کے ذخائر بنانے اور منڈی تک آسان رسائی جیسے اقدامات شامل ہیں۔اس کے علاوہ کاشتکاری میں تعلیم یافتہ لوگوں اور پیشہ وارانہ لوگوں کی دلچسپی کے لیے بھی اقدامات ضروری ہیں تاکہ اس شعبے میں جدید ٹیکنالوجی کے استعمال سے فائدہ اٹھایا جاسکے اور ملک کو اس شعبے میں کسی اور کے سامنے مجبور ہونے سے بچایا جاسکے۔


مضمون نگار ایسوسی ایٹڈ پریس آف پاکستان(اے پی پی) کے ساتھ وابستہ ہیں۔
 [email protected]


 

مضمون 194 مرتبہ پڑھا گیا۔