اردو(Urdu) English(English) عربي(Arabic) پښتو(Pashto) سنڌي(Sindhi) বাংলা(Bengali) Türkçe(Turkish) Русский(Russian) हिन्दी(Hindi) 中国人(Chinese) Deutsch(German)
2024 22:54
Advertisements

الیاس آسی

Advertisements

ہلال کڈز اردو

کشمیری بچے کی پکار

فروری 2024

وہی توپوں بندوقوں کی گھن گرج جاری
پہلے سے جو تھا ،وہی خوف ہے طاری 

وہی رستا لہو ہے وہی آگ کے شعلے
ہوتی ہے زباں بند ،جو یہاں سچ بولے

قتل ہوتے جواں اور یتیم ہوتے بچے
اُمید پہ قائم کے حالات ہوں گے اچھے

بدل چکی ہے دنیا اور بدلہ گیا ہے زمانہ
اِن بچوں کی قسمت ،گھٹ کے مر جانا

ڈال دی ہےدنیا نے ستاروں پہ کمند
مگر کشمیری بچے،آج بھی ہیں بند

بیوائوں کی پکار اور یتیموں کی آواز
کہیں گرتے گولے کہیں جنگ کے ساز

کوئی تو سنے حقوق انسانی کی پکار
کوئی تو سنے ان گولیوں کی بوچھاڑ

بربریت ہے مسلط جس میں کوئی شک نہیں
کیا چین سے جینے کا یہاں کوئی حق نہیں

الیاس آسی
 

مضمون 594 مرتبہ پڑھا گیا۔

الیاس آسی

Advertisements