شعر و ادب

نغمۂ پاکستان !

ہے آج میری سوچ کا اِک اور ہی آہنگ
ہر اہلِ وطن مجھ کو نظر آتا ہے خُرسنگ
ہوں کیسے بیاں پاک وطن تیرے سبھی رنگ
مخموُر ہوا جاتا ہوں میں چل کے ترے سنگ
ہر سمت تیرے حُسن کے بکھرے ہیں نظارے
فطرت تجھے کرتی ہے سرِ عام اشارے!
ہر دل میں یہاں موجزن اِک جذبۂ خدمت
ہے ہم کو جہاں بھر سے مقدم تیری عزّت
محنت کشوں میں اپنے ہے اِس درجہ کی ہمت
اغیار کریں رشک ، فدا اپنی ہو ملت
ہے کام کوئی جس کو نہ یہ ہاتھ سنواریں
ہے رنگِ چمن اِن سے، انہیں سے ہیں بہاریں!
اِس ملکِ خدا داد کا آئین ہے قرآن
ہے ناز ہمیں اس پہ، یہی اپنے ہے ایمان
اسلام کے ہے نُور سے معموُر ہر دیوان
دن رات یہاں چرچے اسی کے بہ ہر عنوان
ہر فَرد مجاہد ہے یہاں دینِ مبیں کا
مانا ہوا انسان ہے یہ روئے زمیں کا!
(خواجہ )محمد اصغر پرے    
 

یہ تحریر 302مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP