شعر و ادب

اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی

اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
چاغی سے ذرا آگے
غوری سے ذرا بہتر
شاہیں سے ذرا بڑھ کر
اللہ کی رحمت سے
لہرا کے علم ساتھی
اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
یہ دست ہنر تیرا 
حرکت میں رہے ہر دم
برکت میں رہے ہر دم
آرام نہیں کرنا
لینا نہیں دم ساتھی
اک اور قدم ساتھی ۔۔۔اک اور قدم ساتھی
اس شب کے اندھیرے میں
تو صبح کا تارا ہے
تو سچ کی گواہی ہے
تو حق کا سپاہی ہے
تو مرد حرم ساتھی
اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
یہ جادہ منزل ہے
منزل تو نہیں تیری
ہے آج فلک تیرا 
ہے آج زمیں تیری
جزبہ نہ ہو کم ساتھی
اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
تو مان ہے دھرتی کا 
تو شان ہے ملت کی
ہر کار نمایاں سے
کر جرأت و عظمت کی 
تاریخ رقم ساتھی
اک اور قدم ساتھی۔۔۔اک اور قدم ساتھی
 ڈاکٹر نذیر قیصرانی 
 

یہ تحریر 87مرتبہ پڑھی گئی۔

TOP